[]
Home » Events » Jamiat Ulama-i-Hind demands stern legal action against those who threatened to massacre Muslims
Jamiat Ulama-i-Hind demands stern legal action against those who threatened to massacre Muslims

Jamiat Ulama-i-Hind demands stern legal action against those who threatened to massacre Muslims

Spread the love

This is not just a matter of Muslims but of the constitution, law, unity and integrity of the country: Maulana Arshad Madani

پریس ریلیز

مسلم مخالف تقریروں اور دھرم سنسدجیسے پروگراموں پر پابندی کے لئے جمعیۃعلماء ہند سپریم کورٹ میں مسلمانوں کا قتل عام کرانے کی دھمکی دینے والوں کے خلاف جمعیۃعلماء   ہند نے سخت قانونی کارروائی کا مطالبہ کیا
یہ محض مسلمانوں کا نہیں بلکہ ملک کے آئین، قانون، اتحاداورسالمیت کا معاملہ ہے: مولانا ارشدمدنی


نئی دہلی10/جنوری 2022
پچھلے کچھ عرصہ سے ملک میں مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز تقریروں اور بیانات میں اچانک شدت آگئی ہے، یہاں تک کہ حال ہی میں ہریدوار اور دہلی میں حکومت کی ناک کے نیجے منعقد ہونے والے پروگراموں میں نہ صرف کھل کر اشتعال انگیزیاں کی گئیں، بلکہ ہندوراشٹرکے قیام کے لئے اکثریت کو مسلمانوں کے قتل عام پر اکسانے کی دانستہ خطرناک سازش بھی کی گئی، مگر افسوس کی بات تویہ ہے کہ ان دونوں معاملوں میں اب تک کسی طرح کی کوئی قانونی کارروائی نہیں ہوئی ہے

ایسے میں مجبورہوکر جمعیۃعلماء ہند کے صدرمولانا ارشدمدنی کی ہدایت پر جمعیۃعلماء ہند نے اس معاملہ میں بھی ملک کی سب سے بڑی عدالت سپریم کورٹ کا رخ کیا ہے امید افزابات یہ ہے کہ جمعیۃعلماء ہند کی اس پٹیشن کو سماعت کے لئے منظورکرلیاگیاہے، یہ پٹیشن گزشتہ 4جنوری کو آئین کی دفعہ 32کے تحت داخل کی گئی ہے، جس کا ڈائری نمبر 691/2022ہے، اس پورے معاملہ پر اپنے ردعمل کا اظہارکرتے ہوئے مولانا ارشدمدنی نے کہا کہ ریاست اور مرکزکی قانون نافذکرنے والی ایجنسیوں کااپنے فرائض منصبی کے ادانہ کرنے سے پورے ملک میں انتہائی مایوس کن صورت حال پیداہوگئی ہے،

دھرم سنسد اوردوسری جگہوں پر ہونے والی شرانگیزتقریروں پر مرکزاورصوبائی حکومتوں کی خاموشی نے صورت حال کی سنگینی میں اور اضافہ کردیاہے، یہ کتنے افسوس کی بات ہے کہ ایک ایسے جمہوری ملک میں جس کے آئین میں ہر شہری کو یکساں حقوق دیئے گئے ہیں اور سب کے ساتھ یکساں سلوک کی ہدایت کی گئی ہے، کچھ لوگ کھلے عام ملک کی سب سے بڑی اقلیت کے خلاف نہ صرف شرانگیزی کرتے ہیں بلکہ اکثریت کو اس کے قتل عام کے لئے اکسانے کی سازش بھی کی جاتی ہے، مگر ایسے لوگوں کے خلاف معمولی دفعات کے تحت بھی کوئی کارروائی نہیں ہوتی،آج عام چرچا ہے کہ گورنمنٹ اور سیاسی لوگوں کی خاموشی یہ بتارہی ہے کہ یہ جرم کے اندرشریک ہیں

، اور شدت پسند لوگوں کو سیاسی پشت پناہی حاصل ہے، شاید یہی وجہ ہے کہ پولس ایف آئی آرکے بعد بھی ان لوگوں پر ہاتھ ڈالتے ہوئے گھبراتی ہے، اسی لئے شرپسند لوگ بے خوف وخطر، دہشت گردانہ عمل کو انجام دیتے ہیں کیونکہ ان کو یقین ہے کہ ہماری سرپرستی کرنے والے اقتدارمیں موجودہیں، مولانا مدنی نے کہا کہ کشمیر سے کنیاکماری تک لوگ خوف و ہراس میں مبتلاہیں، لیکن ہم موجودہ حالات سے مایوس ہر گز نہیں ہیں اگرعزم مضبوط ہوتومایوسی کے انہی اندھیروں میں سے امید کی نئی شمع روشن ہوسکتی ہے، انہوں نے کہا کہ مایوس ہونے کی ضرورت نہیں ہے،

کیونکہ زندہ قومیں حالات کے رحم وکرم پہ نہیں رہتی ہیں بلکہ اپنے کرداروعمل سے حالات کا رخ پھیردیا کرتی ہیں، مولانا مدنی نے کہا کہ جدوجہد آزادی میں قربانی دینے والے ہمارے بزرگوں اورمہاتماگاندھی اورنہرووغیرہ نے جس ہندوستان کا خواب دیکھاتھا وہ یہ ہندوستان ہرگز نہیں ہوسکتا، ہمارے بزرگوں اورمہاتماگاندھی اورنہرو وغیرہ نے ایک ایسے ہندوستان کا خواب دیکھاتھا جس میں بسنے والے تمام لوگ نسل برادری اور مذہب سے اوپر اٹھ کر امن وآتشی کے ساتھ رہ سکیں مگر ان حالات میں امید افزابات یہ ہے کہ تمام ریشہ دوانیوں کے باوجود ملک کی اکثریت فرقہ پرستی کے خلاف ہے، انہوں نے یہ بھی کہا کہ ملک کے انصاف پسند لوگ چپ نہیں ہے، وہ جو کرسکتے ہیں کررہے ہیں،

مسلح افواج کے سابق سربراہان، سرکردہ بیوروکریٹ، سپریم کورٹ کے ممتازوکلاء اور دوسری سیکڑوں اہم شخصیات اس حوالہ سے صدرجمہوریہ ہند،چیف جسٹس آف انڈیا کو خطوط لکھ چکی ہیں مگر اس کے باوجود حکومت اور اس کی ایجنسیاں دونوں خاموش ہیں، دوسری طرف کسی طرح کی کارروائی نہیں ہونے سے شرپسند بے خوف وخطر حسب معمول شرانگیزی اور شدت پسندانہ عمل میں مصروف ہیں، انہیں یہ یقین ہوچلاہے کہ قانون کے ہاتھ ان کی گردنوں تک نہیں پہنچ سکتے، کیونکہ ان کی سرپرستی کرنے والے اقتدارمیں موجودہیں، انہوں نے یہ بھی کہا کہ ہمیں امید ہے کہ دوسرے معاملوں کی طرح اس معاملہ میں بھی ہمیں انصاف ملے گا کیونکہ یہ محض مسلمانوں کا نہیں ملک کے آئین قانون اتحاداور سالمیت کامعاملہ ہے، پٹیشن میں عدالت سے درخواست کی گئی ہے کہ جو لوگ ملک میں اتحادویکجہتی کو ختم کرنے کے لئے ایسا کررہے ہیں،ان کے خلاف سخت قوانین کے تحت کارروائی ہو…

Press Release:
Jamiat Ulama-i-Hind in Supreme Court to ban anti-Muslim speeches and programs like Dharma Sansad

Jamiat Ulama-i-Hind demands stern legal action against those who threatened to massacre Muslims

This is not just a matter of Muslims but of the constitution, law, unity and integrity of the country: Maulana Arshad Madani

New Delhi: 10 January 2022
Hate speeches and statements against Muslims have suddenly intensified in the country in recent times. Even the recent programs held, under government’s nose, in Haridwar and Delhi have not only provoked open provocations, but have also deliberately conspired to provoke the majority to massacre Muslims for the establishment of Hondurasshtra, but unfortunately, no legal action has been taken in these two cases so far.

In such a situation, on the direction of Maulana Arshad Madani President of the Jamiat Ulama-i-Hind, Jamiat Ulama-i-Hind had to approach the country’s highest court, the Supreme Court, in this matter as well. The petition was filed on January 4, 2013 under Section 32 of the Constitution, which has Diary No. 691/2022.

Reacting to the whole matter, Maulana Arshad Madani said that the state and central law enforcement agencies have not fulfilled their duties, which has created a very depressing situation in the whole country. The silence of the central and state governments on the controversial speeches in the Dharma Sansad and elsewhere has added to the gravity of the situation.

It is matter great sorrow that in a democratic country where every citizen has given equal rights and all are treated equally in the constitution, some people are not only openly delivering hate speeches against the largest minority in the country but also conspiracies are hatched to incite the majority to assassinate them, and no action is taken against such people even under minor provisions.

It is a common rumor today that the silence of the government and the political people indicates that they are complicit in the crime, and that the extremists have political backing, which is probably why the police are afraid to arrest them even after the FIR. That is why miscreants carry out terrorist acts without any fear because they believe that our patrons are in power.

He also said that the just people of the country are not silent, they are doing what they can. Former Chiefs of the Armed Forces, leading bureaucrats, prominent Supreme Court lawyers and hundreds of other dignitaries have written letters to the President of India, and the Chief Justice of India. But both the government and its agencies are silent. “We hope that justice will be done in this case as well as in other cases because it is not just a matter of Muslims, it is a matter of constitution, law, unity and integrity,” he said.

The petition requests the court to take stern action against those who are doing so in order to destroy the unity of the country. A nodal officer should be appointed in each district to identify any program that contains hate speech, and to take immediate legal action against program organizers and provocateurs.

The petition also demands that the honorable court should direct the Director General of Police, Law and Order and other officers of all the states to file a case within six hours of receiving a complaint of hate speeches, and ensure the arrest of the accused. It has been requested that the charge sheet against the accused should be filed in the court on time, the police should cooperate with the judiciary for speedy hearing of the case, and also fast track courts be set up for expeditious hearing of such cases.

It is also requested that guidelines be prepared for the denial of bail to persons who constantly make statements which not only disrupt law and order in the country but also conspire to incite the majority against a particular sect. In the petition, 30 such incidents have also been identified. It is noteworthy that in this petition, the head of Jamiat Ulama-i-Hind Legal Cell, Gulzar Ahmad Azmi, has become the plaintiff.

The petition has been prepared by the advocate Sarim Naved on the legal advice of Senior Advocate Nitya Rama Krishnan Today, the President of Jamiat Ulama-i-Hind, Maulana Arshad Madani, welcomed the Chief Justice of India’s agreement to hear the petition filed in the Haridwar Dharma Hate Speech case.

Fazlur Rahman Qasmi
Press Secretary
Jamiat Ulama-i-Hind, New Delhi
09891961134

Please follow and like us:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

You may use these HTML tags and attributes: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>

Scroll To Top
error

Enjoy our portal? Please spread the word :)