[]
Home » Events » Poetry/Literature » سارا عالم تھا ! میری میت ، پر

سارا عالم تھا ! میری میت ، پر

 غزل

تم نہ آۓ ! تو ، کیا سحر نہ ہوئی ؟۔
ہاں ! مگر چین سے ، بسر نہ ہوئی
´
عشق میں ، جان و دل لٹے ! دونوں
ایک کی ایک کو ، خبر نہ ہوئی

اے ! شب غم کے ، جاگنے والو
کیا کرو گے ؟ اگر ، سحر نہ ہوئی

اپنی رسوائی کا ، خیال اتنا ؟۔
میری بربادی پے ، نظر نہ ہوئی

تم بھی ، اچھے ، رقیب بھی ، اچھے
میں ، برا تھا ! میری ، گزر نہ ہوئی

سارا عالم تھا ! میری میت ، پر
بے خبر ! کیا ؟ تجھے خبر نہ ہوئی

منزل عشق کے تھکے ، غالب
ایسے سوۓ ! کہ ، پھر سحر نہ ہوئی

*****************

بشکریہ گلدستہ گروپ

.

Please follow and like us:
READ ALSO  आंख अपनी चुराना नहीं चाहिए

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

five × 2 =

You may use these HTML tags and attributes: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>

Scroll To Top
error

Enjoy our portal? Please spread the word :)